1 صحيح مسلم: كِتَابُ الزَّكَاةِ (بَابُ مَا أَنْفَقَ الْعَبْدُ مِنْ مَالِ مَوْلَاهُ)

أحاديث صحيح مسلم كلها صحيحة

1025. و حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَابْنُ نُمَيْرٍ وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ جَمِيعًا عَنْ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ قَالَ ابْنُ نُمَيْرٍ حَدَّثَنَا حَفْصٌ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زَيْدٍ عَنْ عُمَيْرٍ مَوْلَى آبِي اللَّحْمِ قَالَ كُنْتُ مَمْلُوكًا فَسَأَلْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَأَتَصَدَّقُ مِنْ مَالِ مَوَالِيَّ بِشَيْءٍ قَالَ نَعَمْ وَالْأَجْرُ بَيْنَكُمَا نِصْفَانِ...

صحیح مسلم:

کتاب: زکوٰۃ کے احکام و مسائل

(باب: غلام نے اپنے آقا کے مال سےجو خرچ کیا)

1025.

محمد بن زید نے آبی اللحم (غفاری) رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے آزاد کردہ غلام عمیر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کی، انھوں نے کہا: میں غلام تھا، میں نے رسول اللہ ﷺ سے پوچھا: کیا میں اپنے آقاؤں کے مال میں سے کچھ صدقہ کر سکتا ہوں؟ آپﷺ نے فرمایا: ’’ہاں، اور اجر تم دونوں کےدرمیان آدھا آدھا (برابر برابر) ہو گا۔‘‘

...

2 سنن ابن ماجه: كِتَابُ التِّجَارَاتِ (بَابُ مَا لِلْعَبْدِ أَنْ يُعْطِيَ وَيَتَصَدَّقَ)

صحیح

2297. حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ غِيَاثٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زَيْدٍ عَنْ عُمَيْرٍ مَوْلَى آبِي اللَّحْمِ قَالَ كَانَ مَوْلَايَ يُعْطِينِي الشَّيْءَ فَأُطْعِمُ مِنْهُ فَمَنَعَنِي أَوْ قَالَ فَضَرَبَنِي فَسَأَلْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَوْ سَأَلَهُ فَقُلْتُ لَا أَنْتَهِي أَوْ لَا أَدَعُهُ فَقَالَ الْأَجْرُ بَيْنَكُمَا...

سنن ابن ماجہ:

کتاب: تجارت سے متعلق احکام ومسائل

(باب: غلام کیا کچھ دے سکتا ہے اور صدقہ کر سکتا ؟)

2297.

حضرت آبی اللحم ؓ کے آزاد کردہ غلام حضرت عمیر ؓ سے روایت ہے، انہوں نے فرمایا: میرے آقا مجھے (کھانے کی) کوئی چیز دیتے تو میں (دوسروں کو) کھالا دیتا۔ انہوں نے مجھے منع کیا۔ یا فرمایا: انہوں نے مجھے مارا۔ میں نے یا انہوں نے نبی ﷺ سے (اس صورت ھال کے متعلق) دریافت کیا۔ میں نے کہا: میں تو اس کام سے باز نہیں آؤں گا۔ یا (کہا) میں یہ کام ترک نہیں کروں گا تو آپ ﷺ نے فرمایا: ثواب تم دونوں کو ملے گا۔

...